وزیراعظم نےکہا- مودی نئی ایجوکیشن پالیسی سے ہندوستان تعلیم کا ’گلوبل ہب‘ بنےگا– Urdu News


وزیراعظم نریندر مودی نے نئی تعلیمی پالیسی کو لوگوں کی خواہشات کا اظہار قرار دیتے ہوئے اس سے لوگوں کی ذہنیت بدلنے اور نوجوان نسل کو خودکفیل بنانے اور ملک کو تعلیم کا’گلوبل ہب‘ بنانے میں مدد ملےگی۔

وزیراعظم نےکہا- مودی نئی ایجوکیشن پالیسی سے ہندوستان تعلیم کا ’گلوبل ہب‘ بنےگا۔

نئی دہلی: وزیراعظم نریندر مودی نے نئی تعلیمی پالیسی کو لوگوں کی خواہشات کا اظہار قرار دیتے ہوئے اس سے لوگوں کی ذہنیت بدلنے اور نوجوان نسل کو خودکفیل بنانے اور ملک کو تعلیم کا ’گلوبل ہب‘ بنانے میں مدد ملے گی۔  وزیراعظم مودی نے یہاں اسمارٹ انڈیا ہیکتھن کے گرینڈ فائنل سے خطاب کرتے ہوئے یہ بات کہی۔ یہ چوتھا ہیک تھن ہے جس کے فائنل میں دس ہزار سے زیادہ طلبہ حصہ لے رہے ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ نئی تعلیمی پالیسی میں ملک کے نوجوان نسل کو نوکری تلاش کرنے والے نوجوان بنانے کی جگہ نوکری دینے والے نوجوان بنانے پر زور دیا جائے گا اور اس سے خودکفیل ہندوستان بنانے میں مدد ملے گی۔ نوجوانوں کو اب نوکری ہی نہیں کرنی ہے بلکہ انہیں خود بھی خودکفیل بننا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ نئی تعلیمی پالیسی صرف دستاویز نہیں ہے بلکہ یہ لوگوں کی خواہشات کا اظہار ہے اور اکیسویں صدی میں لوگوں کی ضرورتوں کو پورا کرنےکا موقع بھی دیتا ہے۔

وزیر اعظم مودی نے بتایا کہ نئی تعلیمی پالیسی میں ملک کے نوجوان نسل کو نوکری تلاش کرنے والے نوجوان بنانےکی جگہ نوکری دینے والے نوجوان بنانے پر زور دیا جائےگا اور اس سے خودکفیل ہندوستان بنانے میں مدد ملے گی۔

وزیر اعظم مودی نے بتایا کہ نئی تعلیمی پالیسی میں ملک کے نوجوان نسل کو نوکری تلاش کرنے والے نوجوان بنانےکی جگہ نوکری دینے والے نوجوان بنانے پر زور دیا جائےگا اور اس سے خودکفیل ہندوستان بنانے میں مدد ملے گی۔

وزیراعظم نریندر مودی نے کہا کہ پہلے طلبہ اپنی پسند کا موضوع نہیں پڑھ پاتے تھے اور ان پر دوسرا موضوع پڑھنے کا دباؤ رہتا تھا لیکن اب طلبہ اپنی پسند کا موضوع پڑھیں گے اور ان میں خوداعتمادی پیدا ہوگی۔ مودی نے یہ بھی کہا کہ نئی تعلیمی پالیسی میں ملٹی پل انٹری اور ملٹی پل ایگزٹ کی بھی بات کہی گئی ہے اور ملٹی ڈسپلنسری پڑھائی پربھی زور دیا گیا ہے۔ اس معاملے میں انہوں نے رویندر ناتھ ٹیگور اور لیونارڈو دا ونچی کی کثیر شعبہ جاتی صلاحیتوں کا بھی ذکر کیا۔



Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *